گلشنِ حنفیّت کے سدا بہار پھول، امام احمد رضا بریلوی

Abstract خلاصہ

مولانا برصغیر پاک وہند کی سرزمین پر ایک وہ کامل ومکمل ہستی ہیں، جنہوں نے علم وفن فقہ میں نہ صرف تفہیم حاصل کی بلکہ تصحیل علم کے بعد اسلاف فقھاء کی پیروی کرتے ہوئے فرمان الٰہی کو پورا کیا۔امام ابوحنیفہ کو محدثین ومفسرین اور فقھاء فقیہہ اعظم وامام اعظم کہنے میں برابر کے شریک ہیں اور مولانا گلشن امام اعظم (ابوحنیفہ)کے سدا بہار پھول ہیں آپ نے فقہ حنفیہ کو پاک و ہند میں اس مقام تک پہنچایا جو قابل رشک ہے۔ مولانا فقہ کے اس مقام پر فائز تھے ،اپنے تو اپنے مخالفین نے بھی کھل کر آپکی عزت افزائی کرتےہیں۔ فتاویٰ رضویہ تو انکی ایک ایسی تصنیف ہے، جس نے تمام دنیا کو حیران کر دینے اور تمام فقہاء علماء کے اسکو بڑی دلچسپی سے پڑھنے اور مولانا کی علمیت کی داد دینے اور علامہ اقبال ،محمد ذکریا پشاوری ، صدرالافا ضل ،ملک غلام علی وغیرہ جیسے مختلف علماء جنہوں نے فتاویٰ رضویہ کا مطالعہ کیااور مولانا کے بارےمیں جو لکھا وہ عبارات مقالے میں شامل ہیں۔ مولانا کو مجدد دین وملت قرار دینے ،انکی فکرکی وسعت اورگہرائی کو بڑے بڑے علماءنے بیان کیا مقالے میں دوعرب علماء کی عربی عبارات کو نقل کیاگیا۔ جس سے پتہ چلا مولانا نے دوسرے علوم کے علاوہ فقہ پر جو کام کیا انکی فقہی مہارت کو تمام معاصرین تسلیم کرتے ہیں۔ مولانا کی خدمات اور ہم پر جو ذمہ داریاں ہیں اگر ہم پورا کریں تو مولانا کی روح کی تازگی کے ساتھ ہماری بھی آخرت سنور جائیگی، اس حوالے چند ایک گزارشات مقالے میں شامل کی گئیں ہیں۔

Author/Editor مصنف ؍ مرتب

Publication Date تاریخ اشاعت

Format

Language

Identifier

181

Journal Name

Volume

Issue

Page Range

107-112

Files

107-112.pdf

Citation

منظور احمد ، محمد, “گلشنِ حنفیّت کے سدا بہار پھول، امام احمد رضا بریلوی,” Research Network رابطہ تحقیق, accessed January 23, 2018, http://research.net.pk/items/show/181.

Item Relations

This item has no relations.

Social Bookmarking

Position: 209 (21 views)